Home / دلچسپ و عجیب / اٹھارہ ہزار سے اٹھارہ ارب روپے

اٹھارہ ہزار سے اٹھارہ ارب روپے

!وہ جوانی میں لکھ پتی سے ککھ پتی ھوئے.. محل سے فٹ پاتھ پر آئے اور دفتر کی ہر چیز بک گئی اور نوبت فاقوں تک آگئی مگر انہوں نے پھر اٹھارہ ہزار روپے سے دوبارہ سٹارٹ لیا اور وہ ملک کے بڑے کاروباری بن گئے.. میں ان سے وہ فارمولا معلوم کرنا چاھتا تھا جس نے انہیں اٹھارہ ہزار سے 18 کروڑ اور پھر 18 ارب تک پہنچا دیا اور مجھے انہوں نے یہ کہانی سنا دی..

میں اب وہ راز جاننا چاہتا تھا مگر ان پر رقت طاری تھی.. وہ آنکھیں صاف کرتے’ ہاتھ ملتے اور لمبے لمبے سانس لیتے تھے.. وہ بڑی دیر تک اس کیفیت میں رہے اور پھر اچانک سر اٹھا کر بولے” میں بھی دراصل اپنے برے وقت میں وہی غلطی کر رہا تھا جو دنیا کے زیادہ تر لوگ کرتے ہیں.. میں اپنے دوستوں عزیزوں’ رشتے داروں’ جاننے والوں اور مخیر حضرات کے پاس جاتا تھا’ ان سے مدد مانگتا تھا.. میرے کچھ دوستوں نے میری مدد کی بھی مگر برے وقت میں ہر مدد برائی ثابت ہوتی ہےمیرا وہ سرمایہ بھی ڈوب گیا.. یہاں تک کہ میرے جاننے والوں نے مجھ سے منہ موڑ لیا.. یہ مجھے دیکھ کر راستہ بدل لیتے تھے یا پھر مجھے پہچاننے سے انکار کر دیتے تھے..میں ان کے رویے پر کڑھتا تھا مگر میں پھر ایک دن قدرت کے راز تک پہنچ گیا.. میں اپنا مسئلہ سمجھ گیا..مجھے محسوس ہوا یہ مصیبت اللہ کی طرف سے بھیجی گئی ہے اور میں جب اس کے حل کے لئے لوگوں کے پاس جاتا ہوں تو اللہ تعالیٰ “مائنڈ” کر جاتا ہے..اللہ کہتا ہے کہ یہ کس قدر بے وقوف انسان ہے.. یہ آج بھی میرے پاس آنے کی بجائے’ یہ مجھ سے مدد مانگنے کی بجائے لوگوں کے دروازوں’ لوگوں کی دہلیزوں پر جا رہا ہے چناچہ اللہ تعالیٰ میری سختی میں اضافہ کر دیتا ہےمجھے معلوم ہوا میں جب تک اللہ کے سامنے نہیں گڑگڑاؤں گا’ میں جب تک اس سے مدد نہیں مانگوں گا’ میری سختی ختم نہیں ہوگی.. چناچہ میں نے وضو کیا اور اللہ تعالیٰ کے در پر ماتھا ٹیک دیا اور اللہ تعالیٰ نے میرے سر سے مصیبتوں کی دھوپ ہٹا دی.. اس نے میرے راستے کھول دیے حاجی صاحب نے لمبی آہ بھری اور بولے.. “آپ مصیبت میں جب بھی کبھی کسی انسان کی طرف دیکھتے ہیں تو اللہ “مائنڈ” کر جاتا ہے اور آپ کی مصیبت میں اضافہ ہوجاتا ہے..

Share

About admin

Check Also

دو زبردست دوست ایک ہی لڑکی کے پیار میں پاگل، دونوں نے اسے محبت بنا لیا،

برازیل کے دو دوستوں کو ایک ہی وقت میں ایک ہی لڑکی سے محبت ہو …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Powered by themekiller.com