Breaking News
Home / اہم خبریں / 86 برس بعد ترکی کے سب سے قدیم ثقافتی ورثےمیں اللہ اکبر کی صدائیں گونج اٹھیں

86 برس بعد ترکی کے سب سے قدیم ثقافتی ورثےمیں اللہ اکبر کی صدائیں گونج اٹھیں

استنبول (ویب ڈیسک) 86 برس بعد ترکی کے آیا صوفیہ میں اللہ اکبر کی صدائیں گونج اٹھیں، مسجد کا اسٹیٹس دوبارہ حاصل کرنے والے ترکی کے سب سے قدیم ثقافتی ورثے میں 24 جولائی کو نماز ادا کی جائے گی۔ تفصیلات کے مطابق ترکی کے سب سے قدیم ثقافتی ورثے آیا صوفیہ میں دہائیوں بعد پہلی

مرتبہ اللہ اکبر کی صدائیں گونج اٹھیں۔آیا صوفیہ میں اللہ اکبر کی صدائیں سننے والا ہر مسلمان پر اپنے جذبات پر قابو نہ رکھ سکا۔ 86 سال بعد پہلا موقع ہے جب آیا صوفیہ میں اللہ اکبر کی صدائیں گونجیں۔ آیا صوفیہ کو 86 سال قبل مسجد سے میوزیم میں تبدیل کیا گیا تھا، جس کے بعد سے یہاں کبھی نماز کی ادائیگی نہیں ہوئی۔ترک صدر طیب اردگان نے کہا ہے کہ ترکی کے آیا صوفیہ میں 24 جولائی کو نماز جمعہ ادا کی جائے گی ۔غاپنے ایک بیان میں اردگان نے کہا کہ لگ بھگ 1500 سالہ قدیم آیا صوفیہ مسلمانوں ، عیسائیوں اور غیر ملکیوں کے لئے کھلا رہے گی ، انہوں نے مزید کہا کہ ترکی نے اسے مسجد میں تبدیل کرنے کے لئے اپنے خودمختار حق کا استعمال کیا ہے اور اس اقدام پر تنقید کی ترجمانی اس کی آزادی پر حملے کے طور پر کرے گی۔ریاست ہائے متحدہ بازنطینی اور مسلم عثمانی سلطنتوں اور اب ترکی میں سب سے زیادہ دیکھے جانے والے یادگاروں میں سے ایک مرکز ، یونیسکو کے عالمی ثقافتی ورثہ سائٹ کی حیثیت کو تبدیل کرنے کے بارے میں تشویش ظاہر کرنے والوں میں امریکہ ، روس اور چرچ کے رہنما بھی شامل تھے۔یونان کی وزارت ثقافت نے عدالتی فیصلے کو مہذب دنیا کے لئے “کھلی اشتعال انگیزی” قرار دیا۔اردگان نے اپنے 17 سالوں میں اسلام کو ترک سیاست کی دھارے میں بدلنے کی کوشش کی ہے۔ انہوں نے طویل عرصے سے چھٹی صدی عمارت کی مسجد کی حیثیت بحال کرنے کی تجویز پیش کی تھی ، جسے مصطفی کمال اتاترک کے تحت جدید سیکولر ترک ریاست کے ابتدائی دنوں میں میوزیم میں تبدیل کردیا گیا تھا۔

Share

About admin

Check Also

مریضوں کو کرونا ویکسین لگانے کے بجائے کتے کاٹے کی ویکسین لگا دی گئی ، جانتے ہیں پھر مریضوں کا کیا بنا؟

بھارتی ریاست اترپردیش میں محکمہ صحت کی مجرمانہ غفلت کی وجہ سے تین خواتین کو …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Powered by themekiller.com